Sad Urdu Ghazal Lyrics | Best collection of Urdu Ghazal Lyrics

Sad Urdu Ghazal Lyrics | Best collection of Urdu Ghazal Lyrics

Sad Urdu Ghazal Lyrics: this is a very popular and nice lyrics in Urdu world nearly Sad Urdu Ghazal Lyrics every people want to read it because Sad Urdu Ghazal Lyrics has some prominent adjectives. Here in this article and poetry included Mir Taqi Mir Lyrics & other many more poets who is also known at the best level in Sad Urdu Ghazal Lyrics as well as Urdu Ghazal, Shayari, Poetry & Sad hsyari , sad poetry so I have brought for every one who is very interested in Urdu Ghazal Lyrics and Sad Ghazal Lyrics for those these are most nice lyrics.
sad urdu ghazal lyrics, best collection of urdu ghazal lyrics, ghazal lyrics

جب دل تمہارا اپنا ہو…… پر باتیں ساری اس کی ہوں
جب سانسیں تمہاری اپنی ہوں …… اور خوشبو آتی اس کی ہو
جب حد درجہ مصروف ہو تم ……وہ یاد اچانک آئے تو
جب آنکھیں نیند سے بوجھل ہوں ……تم پاس اسے ہی پاؤ تو
پھر خود کو دھوکہ مت دینا……اور اس سے جاکے کہہ دینا
اس دل کو محبت ہے تم سے……اس دل کو محبت ہے تم سے
sad urdu ghazal lyrics, ghazal lyrics
……………………………………

Chupke Chupke Rat din : Ghazal Lyrics

Urdu Ghazal lyrics was told by Mir taqi Mir which is a best Ghazal Lyrics in Udru literary. Here you can find out Sad Urdu Ghazal Lyrics together Sad shayari and sad poetry in Urdu. kindly read and be joy. 

چپکے چپکے رات دن آنسو بہانا یاد
ہم کو اب تک عاشقی کا وہ زمانہ یاد ہے
تجھ سے ملتے ہی وہ کچھ بیباک ہوجانا مرا
اور ترا دانتوں میں وہ انگلی دبانا یاد ہے
چوری چوری ہم سے تم آکر ملے تھے جس جگہ
مدتیں گزریں پر اب تک وہ ٹھکانہ یاد ہے
کھیچ لینا وہ مرا پردے کا کونہ دفعتا
اور دوپٹے سے ترا وہ منہ چھپانا یاد ہے
دوپہر کی دھوپ میں میرے بلانے کے لئے
وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے
باہزاراں اضطراب و صد ہزاراں اشتیاق
تجھ سے وہ پہلے پہل دل کا لگانا یاد ہے
جان کر سوتا تجھے وہ قسمِ پاپوشی مرا
اور ترا ٹھکرا کے وہ سر مسکرانا یاد ہے
تجھ کو جب تنہا کبھی پانا تو ازراہِ لحاظ
حالِ دل باتوں ہی باتوں میں جتانا یاد ہے
جب سوا میرے تمہارا کوئی دیوانہ تھا
سچ کہوں کیا تم کو بھی وہ کارخانہ یاد ہے
غیر کی نظروں سے بچ کر سب کی مرضی کے خلاف
وہ ترا چوری چھپے راتوں کا آنا یاد ہے
آگیا گر وصل کی شب بھی کہیں ذکرِ فراق
وہ ترا رور و کے بھی مجھ کو رلانا یاد ہے
دیکھنا جو مجھ کو برجستہ سوسو ناز سے
جب منالینا تو پھر خود روٹھ جانا یاد ہے
بے رخی کے ساتھ سنانا دردِ دل کی داستاں
اور کلائی میں ترا وہ کنگن گھمانا یاد ہے
وقتِ رخصت الوداع کا لفظ کہنے کے لئے
وہ ترے سوکھے لبوں کا تھرتھرانا یاد ہے
sad urdu ghazal lyrics, ghazal lyrics, sad shayari, sad poetry

sad urdu ghazal lyrics, sad shayari, sad poetry, sad urdu ghazal lyrics

sad urdu ghazal lyrics, sad ghazal lyrics, urdu ghazal lyrics, sad shayari, sad poetry
…………………………

عکس کتنے اتر گئے مجھ میں ……پھر نہ جانے کدھر گئے مجھ میں
میں نے چاہا تھا زخم بھر جائیں ……زخم ہی زخم بھر گئے مجھ میں
میں وہ پل تھا جو کھا گیا صدیاں ……سب زمانے گزر گئے مجھ میں
یہ جو میں ہوں ذرا سا باقی ہوں ……وہ جو تم تھے وہ مر گئے مجھ میں
………………………………………………

حقیقت جان ایسی حماقت کون کرتا ہے
بھلا بے فیض لوگوں سے محبت کون کرتا ہے
بتاؤ جس تجارت میں خسارا ہی خسارا ہو
بنا سوچے خسارے کی تجارت کون کرتا ہے
ہمیں ہی غلط فہمی تھی کسی کے واسطے ورنہ
زمانے کے رواجوں سے بغاوت کون کرتا ہے
خدا نے صبر کرنے کی مجھے توفیق بخشی ہے
ارے جی بھر کے تڑپاؤ،شکایت کون کرتا ہے
کسی کے دل کے زخموں پر مرہم رکھنا ضروری ہے
مگر اس دور میں ہمدم یہ زحمت کون کرتا ہے

…………میر تقی میر…………
پتہ پتہ بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے
جانے نہ جانے گل ہی نا جانے باغ تو سارا جانے ہے
لگنے نہ دے بس ہو تو اس کے گوہر گوش کے بالے تک
اس کو فلک چشم و مہ وخورکی پتلی کا تارا جانے ہے
آگے اس متکبر کے ہم خدا خدا کیا کرتے ہیں
کب موجود خدا کو وہ مغرور خود آرا جانے ہے
عاشق سا تو سادہ کوئی اور نہ ہوگا دنیا میں
جی کے زیاں کو عشق میں اس کے اپنا وار جانے ہے
چارہ گری بیماری دل کی رسم شہر حسن نہیں
ورنہ دلبرِ ناداں بھی اس داد کا چارہ جانے ہے
کیا ہی شکار فریبی پر مغرور ہے  وہ صیاد بچہ
طائر اڑتے ہوا میں سارے اپنی اسارا جانے ہے
مہرو وفا و لطف و عنایت ایک سے واقف ان میں نہیں
اور تو سب کچھ طنزوکنایہ رمزو اشارہ جانے ہے
عاشق تو مردہ ہے ہمیشہ جی اٹھتا ہے دیکھے اسے
یار کے آجانے کو یکایک عمر دوبارا جانے ہے
کیا کیا فتنے سر پر اسے کے لاتا ہے معشوق اپنا
جس بے دل بیتاب و تواں کو عشق کا مارا جانے ہے
رخنوں سے دیوارِ چمن کے منہ کو لے ہے چھپا یعنی
ان سوراخوں کے ٹک رہنے کو سو کا نظارہ جانے ہے
تشنۂ خوں ہے اپنا کتنا میر ناداں تلخی کش
دمدار آبِ تیغ کو اس آبِ گوارا جانے ہے






Post a Comment

0 Comments